نشانات
تناؤ کے نشانات
دو رنگی جلد
بائیو آئل، ® نشانات اورتناؤ کے نشانات کو دُور کرنے کے لیے دُنیا کی نامور پراڈکٹ ہے۔
Bio-Oil home Bio-Oil home


استعمال
نشانات
نشانات
چوٹ یا زخم مندمل ہونے کے دوران جلد پر نشانات کا نظر آنا ایک لازمی سی بات ہے ،جس کی وجہ زخم کی جگہ پر کولاجن کی زیادہ افزائش ہے ۔ وقت گزرنے کے ساتھ ان نشانات میں تبدیلی آتی رہتی ہے ،لیکن یہ مستقل رہتے ہیں۔بائیو آئل،ممکنہ حد تک ان نشانات کو بدنما ہونے سے روکتا ہے مگر مستقل طور پر انھیں ختم نہیں کرسکتا۔
بائیو آئل سے نشان والی جگہ پر دن میں دو مرتبہ دائرے میں گھماتے ہوئے مساج کریں اور یہ سلسلہ کم از کم تین ماہ جاری رکھیں۔جب زخم مندمل ہوجائے تو نئے نشانات پر بائیو آئل دن میں صرف ایک مرتبہ لگائیں اور پھٹی ہوئی جلد پر لگانے سے گریز کریں۔ اس کے اثرات ہر جلد پرالگ ہوں گے ۔
تناؤ کے نشانات
تناؤ کے نشانات
جب جسم کی افزائش ، جلد آنے سے تیز ہوتو جلد پھٹ جاتی ہے اور زخم مندمل ہونے کے بعدایک نشان بن جاتا ہے ۔یہ نشانات، اسٹریچ مارکس کی صورت میں جلد کی سطح پر واضح نظر آتے ہیں ۔
اسٹریچ مارکس بننے کے امکانات کا انحصار جلد کی قسم، نسل، عمر، خوراک اور جلد میں پانی کی مقدارپر ہوتا ہے۔ اسٹریچ مارکس کی پریشان کن صورتحال سے متاثرہ افراد میں حاملہ خواتین، باڈی بلڈرز، بلوغت کی عمر میں جسم میں تیزی سے رونما ہونے والی تبدیلیوں سے گزرنے والے لڑکے اور لڑکیوں کے علاوہ ایسے افرادشامل ہیں جن کا وزن تیزی سے بڑھ رہا ہوتا ہے ۔
اسٹریچ مارکس،جلد پر مستقل رہتے ہیں۔ بائیو آئل،ممکنہ حد تک ان نشانات کو بدنما ہونے سے روکتاتو ہے ،مگر مستقل طور پر انھیں ختم نہیں کرسکتا۔
بائیو آئل سے نشان والی جگہ پر دن میں دو مرتبہ دائرے میں گھماتے ہوئے مساج کریں اور یہ سلسلہ کم از کم تین ماہ جاری رکھیں۔دورانِ حمل، چوتھے مہینے سے بائیوآئل کا استعمال شروع کردینا چاہئے، خاص طور پر جسم کے ان حصوں پر،جہاں اسٹریچ مارکس پیدا ہونے کے زیادہ امکانات ہوتے ہیں ۔ جیسے پیٹ، چھاتیاں ، کمر کا نچلا حصہ ، کولہے اور رانوں پر۔ اس کے اثرات ہر جلد پرالگ ہوں گے ۔
ناہموار جلد
ناہموار جلد
ہمارے جسم میں میلانن نامی مادّے کی مقدار کی زیادتی کی وجہ سے جلد ناہموار ہوجاتی ہے،جو کئی بیرونی عوامل کی وجہ سے بھی ہو سکتی ہے۔ جیسے دھوپ میں زیادہ رہنا یا جلد صاف رکھنے والی غیر معیاری پراڈکٹس کا استعمال ؛یا اندرونی عوامل جیسے دورانِ حمل ہارمونز کی کمی یا زیادتی، مینوپوز میں یا مانع حمل ادویات کھانا وغیرہ۔ بائیو آئل کا استعمال ناہموار جلد کی رنگت بہتر بنانے میں بہت مفید ہے۔
بائیو آئل کو متاثرہ جگہوں پر دن میں دو مرتبہ ،کم از کم تین ماہ تک لگانا چاہئے۔بائیو آئل میں سن اسکرین جیسی کوئی چیز شامل نہیں ہے۔اگر کوئی سن اسکرین استعمال میں ہو توپہلے ایک بار بائیوآئل لگائیں اور اسے اچھی طرح جذب ہونے دیں۔ اس کے اثرات ہر جلد پرالگ ہوں گے ۔
بڑھتی عمر سے متاثرہ جلد
بڑھتی عمر سے متاثرہ جلد
جلد پہ جھریاں نظر آنا بڑھتی عمر کو ظاہر کرتا ہے جو زیادہ تر جلد میں کولاجن اور ایلاسٹن سپورٹ سسٹم کی کمزوری کی وجہ سے ہوتا ہے ۔بائیو آئل میں بہت سے ایسے اجزاء شامل ہیں جو جلد کو صحت مند، نرم و ملائم اور زیادہ ہموار بنا کر جھریوں کو دُور کرنے میں مدد کرتے ہیں۔ بائیو آئل، جلد کو نمی بھی فراہم کرتا ہے جس سے جلد کی سطح اور رنگت کے ساتھ فائن لائنز اور جھریاں بھی بہترہوجاتی ہیں۔
بائیو آئل کو متاثرہ جگہوں پر دن میں دو مرتبہ لگانا چاہئے۔ مختلف جلد پر اس کے اثرات مختلف ہو سکتے ہیں۔
پانی کی کمی سے متاثرہ جلد
پانی کی کمی سے متاثرہ جلد
جلد پر قدرتی طور پر آئل کی ایک نادیدہ تہ موجود ہوتی ہے جو جلد کی نمی کو باہر نکلنے سے روکتی ہے۔ خشک موسم میں لپِڈ یا چربی کی یہ تہ،جلد کی نمی کو نہیں روک پاتی اور جلدسے بہت زیادہ نمی خارجہوجاتی ہے ۔ روزانہ نہانے یا شاور لینے سے اس کے اخراج میں مزید اضافہ ہو جاتا ہے اور صابن اور پانی لگنے سے بھی لپِڈ یا چربی کی یہ تہ اتر جاتی ہے ۔بائیو آئل ،جلد کی قدرتی آئل والی تہ برقرار رکھتا ہے اور جلد کی نمی کے اخراج کو روکنے والے فنکشن کی بحالی میں مدد دیتا ہے ۔
ُُبائیو آئل کو متاثرہ جگہوں پر دن میں دو مرتبہ لگانا چاہئے۔ اس کے اثرات ہر جلد پرالگ ہوں گے ۔

فارمولہ
فارمولہ
فارمولہ
بائیوآئل کے فارمولے میں شامل مختلف چیزوں یعنی نباتاتی عرقیات اور وٹامنز پر مشتمل ہے ۔اس میں شامل ایک اہم جز، پرسیلن آئل ہے جو اِس فارمولے کو زیادہ اثر انگیز اور مجموعی طور پر بہتربناتا ہے۔ اور اسے ہلکا بنا کر چکناہٹ سے بھی دُور کرتا ہے ۔اس کے علاوہ اِس کا اہم ترین کام نباتاتی عرقیات اور وٹامنز کوصحت افزاء رکھتے ہوئے آسانی سے جلدمیں جذب کرنا ہے ۔
بائیوآئل، کاسمیٹکس پراڈکٹس کے لیے مرتب کردہ یورپین پارلیمنٹ اور کونسل کے حفاظتی تخمینوں کی جانچ پڑتال سے بھی کامیابی سے گزرچکا ہے۔ نقصان دہ پروفائل ، کیمیائی ساخت ، شمولیت کا معیار اور روزمرّہ استعمال کے دیگر تمام معیاروں پر پرکھے جانے اورتمام اجزاء کا ہر سطح پر معیارقرار پانے کے بعد ہی یہ ثابت ہوا ہے کہ بائیوآئل بالکل بھی نقصان دہ نہیں ہے، (بلکہ یہ حاملہ عورتوں کے استعمال کے لیے بھی موزوں ہے) ۔
اجزاء
اجزاء
نباتاتی
کیلنڈیولا آفیسینالس فلاور ایکسٹریکٹ (کیلنڈیولا آئل)
لیونڈیولا اینگسٹی فولیا آئل (لیونڈر آئل)
روزمیرینسآفیسینالس لیف آئل (روزمیری آئل)
اینتھیمس نو بیلس فلاور آئل (کیما مائل آئل)
وٹامن
ریٹینل پلمٹیٹ (وٹامن A )
ٹو کو فیرل ایسیٹیٹ (وٹامنE )
آئل بیس
پیرا فینم لیکوئیڈم
ٹری آئیسینون این آئن
سیٹیئرل ایتھل ہیگزینوٹ
آئیسو پروپیل میرسٹیٹ
گلائیسن سوجا آئل
ہیلیانتھس اینس سیڈ آئل
بی ایچ ٹی
بیسا بولال
خوشبو (گلاب)
پر فم
الفا۔ایسومیتھل آ یونون
ایمل سینا مال
بینزل سیلی سیلیٹ
سٹرونیلول
کومیرن
یوجینول
فرنیسول
جیرینیول
ہائیڈروکسی سٹرونیلول
ہائیڈروکسی آئیسو ہیگزل ۳ ۔سائیکلو ہیگزین کار بوکسل ڈیہائیڈ
لی منین
لینیلول
رنگ
CI 26100
مینیوفیکچر
مینیوفیکچر
بائیوآئل cGMP (کرنٹ گڈ مینوفیکچرنگ پریکٹس)کے تحت اور ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے اصولوں کے مطابق تیار کیا گیا ہے ۔پروڈکشن سے پہلے تمام اجزاء میں کسی قسم کی ملاوٹ اور مائیکرو بائیولوجیکل آلودگی چیک کی جاتی ہے اور پھر ان کے ہر بیچ میں سے تیار کردہ ایک نمونہ لیبارٹری میں ٹیسٹ کیا جاتا ہے اورپھر اسے تجربات کے لیے پانچ سال تک سنبھال کر رکھا جاتا ہے ۔
بائیوآئل کی تمام پیکیجنگ کو ری سائیکل کیا جا سکتا ہے اور اس کے تمام پیپر مٹیریلز، فاریسٹ مینجمنٹ کے مؤثر اصولوں کے تحت تصدیق شدا ہیں۔
بائیوآئل کی تیاری کے دوران کسی قسم کے نقصان دہ مادّوں کا اخراج نہیں ہوتا اور نہ یے خطرناک فضلہ یا پانی بنتا ہے۔

طبّی جانچ پڑتال
نشانات کا مطالعہ،2010
نشانات کا مطالعہ،2010
مرکز جانچ پڑتال
پروڈرم انسٹیٹیوٹ فار اپلائیڈ ڈرمیٹالوجیکل ریسرچ، ہیمبرگ، جرمنی
مقصد
نشانات کے مندمل کرنے میں بائیوآئل کی افادیت کا جائزہ لینا
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 36 خواتین شرکاء شرکاء کی عمر: 18 تا 65 سال نشانات کا عرصہ: نئے بننے والے نشانات سے 3سال پرانے تک نشانات کی جگہیں: پیٹ، ٹانگ، بازو، گردن، گھٹنا، دھڑ، بالائی جسم
طریقئہ کار
ڈبل بلائنڈ، بے ترتیب اور پلاسیبو کنٹرولڈ۔ مریضوں کے ایک جیسے نشانات ہوں یا اتنا بڑا نشان ہو کہ آدھے آدھے نشان پر آئل لگایا جائے اور ان میں موازنہ کیا جائے۔ پراڈکٹ کو آٹھ ہفتے تک روزانہ دو مرتبہ لگایا جائے، متا ثرہ جگہ پر اضافی مساج بالکل نہ کریں۔ آئل کو کسی کی نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا جائے۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد دوسرے، چوتھے اور آٹھویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیں۔ پیشنٹ اینڈ آبزروراسکار اسسمنٹ اسکیل (POSAS) میں موجود مختلف نشانات کو جانچنے کے اصولوں کے مطابق ان کی جانچ پڑتا ل کریں۔
نتیجہ
بائیوآئل ، نشانات کو مندمل اور بہتر کرنے میں انتہائی مؤثر ہے۔ صرف دو ہفتے (15 دن) بعد ہی مریضوں میں شماریاتی طور پر66% موزوں نتائج ملے۔آٹھ ہفتے(57 دن) بعد مریضوں میں 92% بہتری نظر آئی،جو کہ دوسرے ہفتے کے مقابلے میں تین گنا تھی۔ پیشنٹ اینڈ آبزروراسکار اسسمنٹ اسکیل (POSAS) میں، مطالعے کے دوران مسلسل بہتری نظر آئی۔
نشان کا مطالعہ،2005
نشان کا مطالعہ،2005
مرکز جانچ پڑتال
ساؤتھ افریقہ کی میڈیکل یونیورسٹی کی فوٹی بائیو لوجی لیبارٹری
مقصد
نشانات کے مندمل کرنے میں بائیوآئل کی افادیت کا جائزہ لینا
نمونہ
مریض: 24 شرکاء، 22 خواتین اور 2 مرد شرکاء کی عمر: 18 تا 60 سال نشان کی اقسام: معمولی جھلسے ہوئے نشان سے آپریشن کے نشانوں تک (12 بڑے نشان، 14 معمولی نشان۔ ایک مریض کے تین نشان تھے)
طریقئہ کار
سنگل بلائنڈ(تشخیص کنندہ)، رینڈمائزڈ اور کنٹرولڈ۔پیئرڈ اسٹڈی ڈیزائن، مریضوں میں موازنے کی اجازت دیتا ہے۔ مریضوں کے نشانات ملتے جلتے تھے یا ایک نشان ہی اتنا بڑا تھا کہ اس کے آدھے حصّے پر آئل لگا دیا گیا۔ پراڈکٹ کو متا ثرہ جگہ پر بارہ ہفتوں تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ آئل کو نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد چوتھے، آٹھویں اور بارہویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیا گیا۔
نتیجہ
آبجیکٹیواور سبجیکٹیو ،دونوں طرح کی آزمائشوں میں بائیوآئل نے نشانات کو مندمل اور بہتر کردیا۔ 65%مریضوں کے نشانات میں چوتھے ہفتے میں بہتری دیکھنے میں آئی۔
استعمال کنندہ کے نشان کی جانچ پڑتال،2002
استعمال کنندہ کے نشان کی جانچ پڑتال،2002
مرکز جانچ پڑتال
ایٹن مون، سمرسیٹ، یونائیٹڈ کنگڈم
مقصد
82 افراد کی جانچ پڑتال میں ،بائیو آئل لگانے سے نشانات میں بہتری آنے کی صلاحیت کو جانچنا۔
نمونہ
مریض: 82 شرکاء، بشمول بالغان اور بچے نشان کی مدّت: نئے بننے والے نشان سے 10سال پرانے تک نشانات کی اقسام: اُبھرے ہوئے، گہرے نشانات، معمولی جھلسے ہوئے نشان سے آپریشن کے نشانوں تک. نشان کی جگہیں: مختلف
طریقئہ کار
پراڈکٹ کو چار ہفتوں تک دن میں تین دفعہ لگایا گیا۔ شرکاء کوپراڈکٹ کے اچھی طرح جذب ہوجانے تک گولائی میں مساج کرنے کا کہا گیا۔ ابتدا میں اور دوسرے اور چوتھے ہفتے میں انٹرویو لیے گئے۔ شرکاء نے بہتری کا نوٹس لیتے ہوئے اسے 1 سے 9 درجے کے اسکیل پر اپنی رائے کا اظہار کیا (1 سے مراد’’کوئی بہتری نہیں‘‘ اور 9 سے مراد’’بہت بہتر‘‘ تھا)۔
نتیجہ
82% شرکاء کے نشانات میں چار ہفتے بعد بہتری دیکھنے میں آئی۔
کیل مہاسوں کے نشان کا مطالعہ،2012
کیل مہاسوں کے نشان کا مطالعہ،2012
مرکز جانچ پڑتال
ڈپارٹمنٹ آف ڈرمیٹالوجی، پیکنگ یونیورسٹی فرسٹ ہاسپیٹل، بیجنگ، چین۔
مقصد
چینی مریضوں کے چہروں پہ موجود کیل مہاسوں کے نشانات پر بائیو آئل لگانے کے بعد ان میں بہتری کی تشخیص کے لیے ایک تحقیقی مطالعے کا اہتمام کیا گیا۔
نمونہ
مریض: 44 چینی مریض ،جن کے چہروں پہ کیل مہاسوں کے نئے (1 سال سے کم ) نشانات تھے ۔’بائیوآئل ٹریٹمنٹ سیل‘میں 32 مریض اور’نو ٹریٹمنٹ سیل‘ میں12 مریض تھے۔ شرکاء کی عمر: 14 تا 30 سال
طریقئہ کار
رینڈمائزڈ، کنٹرولڈ، گریڈر ۔بلائنڈڈ صلاحیت۔مریضوں نے پہلی اسکریننگ کی جانچ پڑتال میں حصہ لیا ،جس کے بعد ایک ہفتے کا واش آؤٹ پیریئڈ بھی تھا۔ پراڈکٹ کو دس ہفتے تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ آئل کو نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد چوتھے، آٹھویں اوردسویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیا گیا۔ گلوبل اسکارنگ اسکور(GSS) ایک تفتیش کار کے ذریعے، کیل مہاسوں کا رنگ/ سرخی کی پیمائش بذریعہ کروما میٹر، سیبم لیولز کی پیمائش بذریعہ سیبو میٹر، مسّوں اور سوزشی زخموں کی تعداد کی ڈاکومنٹیشن بذریعہ ڈرمیٹالوجسٹ. مریضوں نے ہر وزٹ پر خود تشیخصی سوالنامے بھی پُر کیے۔
نتیجہ
کلینیکل درجہ بندی میں بائیو آئل کی بہترین صلاحیت کا نتیجہ تب برآمد ہوا کہ جب کیل مہاسوں کے سرخ دھبوں یا نشانوں میں کمی ہوئی اور مجموعی طور پر جلد چمکدار ہوگئی۔ خود تشخیصی سوالنامے کے نتائج سے ثابت ہوا کہ 84% سے زائد مریضوں نے اپنے کیل مہاسوں میں مجموعی طور پر بہتری نوٹ کی اور 90% سے زائد کو اپنے نشان کے رنگ میں بہتری نظر آئی۔ کیل مہاسوں کی تعداد اور سیبم کی پیمائش کے نتائج سے ثابت ہوا کہ بائیوآئل کا استعمال کیل مہاسوں یا سیبم رطوبتوں کے اخراج میں اضافہ نہیں کرتا۔
کھنچاؤ کے نشانات کا مطالعہ، 2010
کھنچاؤ کے نشانات کا مطالعہ، 2010
مرکز جانچ پڑتال
پروڈرم انسٹیٹیوٹ فار اپلائیڈ ڈرمیٹالوجیکل ریسرچ، ہیمبرگ، جرمنی
مقصد
نشانات کے مندمل کرنے میں بائیوآئل کی افادیت کا جائزہ لینا
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 38 خواتین شرکاء شرکاء کی عمر: 18 تا 65 سال کھنچاؤ کے نشانات کی مدّت: مختلف (حمل سے قبل،وزن بڑھنے سے، بلوغت کی عمر میں جسم میں تیزی سے ہونے والی تبدیلیاں). کھنچاؤ کے نشان کی جگہیں: پیٹ، ران اور کولہے
طریقئہ کار
ڈبل بلائنڈ، رینڈمائزڈ اور پلاسیبو کنٹرولڈ۔ مریضوں کے نشانات ملتے جلتے تھے یا ایک نشان ہی اتنا بڑا تھا کہ اس کے آدھے حصّے پر آئل لگا دیا گیا اور مریضوں کا موازنہ کیا گیا۔ پراڈکٹ کو متا ثرہ جگہ پر آٹھ ہفتوں تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا، اس دوران ٹارگیٹ ایریا پر مساج نہیں کیا گیا۔ آئل کو نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد دوسرے، چوتھے اور آٹھویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیا گیا۔ پیشنٹ اینڈ آبزروراسکار اسسمنٹ اسکیل(POSAS)کے مطابق، مختلف نشانات دیکھنے میں آئے ۔
نتیجہ
بائیوآئل ، کھنچاؤ کے نشانات کو مندمل اور بہتر کرنے میں انتہائی مؤثر ہے ۔صرف دو ہفتے (15 دن) بعد ہی مریضوں میں شماریاتی طور پر95% موزوں نتائج ملے۔آٹھ ہفتے(57 دن)بعد مریضوں میں 100% بہتری نظر آئی،جو کہ دوسرے ہفتے کے مقابلے میں دُگنی تھی۔ پیشنٹ اینڈ آبزروراسکار اسسمنٹ اسکیل(POSAS) میں، مطالعے کے دوران مسلسل بہتری نظر آئی۔
کھنچاؤ کے نشانات کا مطالعہ، 2005
کھنچاؤ کے نشانات کا مطالعہ، 2005
مرکز جانچ پڑتال
ساؤتھ افریقہ کی میڈیکل یونیورسٹی کی فوٹی بائیو لوجی لیبارٹری
مقصد
نشانات کے مندمل کرنے میں بائیوآئل کی افادیت کا جائزہ لینا
نمونہ
مریض: 20 خواتین شرکاء شرکاء کی عمر: 18 تا 55 سال کھنچاؤ کے نشان کی جگہ: پیٹ
طریقئہ کار
سنگل بلائنڈ(تشخیص کنندہ)، رینڈمائزڈ اور کنٹرولڈ۔پیئرڈ اسٹڈی ڈیزائن،مریضوں میں موازنے کی اجازت دیتا ہے۔ مریضوں کے پیٹ پر دونوں طرف کھنچاؤ کے نشانات تھے،جس سے آدھے پیٹ کے اسٹڈی ڈیزائن کا مرحلہ یقینی ہوا۔ پراڈکٹ کو متا ثرہ جگہ پر بارہ ہفتوں تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ آئل کو نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد چوتھے، آٹھویں اور بارہویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیا گیا۔
نتیجہ
آبجیکٹیو اور سبجیکٹیو دونوں طرح کے تشخیصی جائزوں سے معلوم ہوا کہ بائیوآئل نے کھنچاؤ کے نشانات کو بہتر کرنے میں انتہائی مؤثرکام کیا ۔50% مریضوں میں آٹھ ہفتے بعد بہتری نظر آئی۔
ناہموار جلد کامطالعہ، 2011
ناہموار جلد کامطالعہ، 2011
مرکز جانچ پڑتال
تھامس جے اسٹیفنز اینڈ ایسوسی ایٹس، انکارپوریٹڈ، ٹیکساس، یونائیٹڈ اسٹیٹس آف امریکا۔
مقصد
بائیوآئل کی افادیت کو اس صورت میں جانچنا کہ جب کم تا درمیانی درجے کی دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد والی خواتین نے اپنے چہرے اور گردن پراسے لگایا توناہموار جلد اوراس پر مختلف رنگوں کے دانوں کو بہتر بنانے میں انتہائی مؤثر پایا۔
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 67 خواتین شرکاء ۔ طبّی طور پرجن کے چہرے اور گردن کی جلد، دھوپ میں کم تا درمیانی درجے کی جھلسی ہوئی تھی ۔’بائیوآئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 35 مریضوں،جبکہ ’نو ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 32 مریضوں کو شامل کیا گیا۔ شرکاء کی عمر: 30 تا 70 سال
طریقئہ کار
رینڈمائزڈ، کنٹرولڈ، گریڈر۔ بلائنڈڈ صلاحیت۔ مریضوں نے پہلی اسکریننگ کی جانچ پڑتال میں حصہ لیا، جس کے بعد ایک ہفتے کا واش آؤٹ پیریئڈ بھی تھا۔ پراڈکٹ کوچہرے اور گردن پربارہ ہفتے تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ ابتدائی دوروں میں آئل کو نگرانی میں لگایاگیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد دوسرے، چوتھے، آٹھویں اوربارہویں ہفتے میں طبّی جائزے لیے گئے۔ مریضوں کے چہرے اور گردن کی ناہموار جلد اور دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد کی مناسبت سے طبّی طور پر الگ الگ گریڈنگ کی گئی۔
نتیجہ
بائیوآئل، چہرے اور گردن کی ناہموار جلد اور دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد کو بہتر بنانے میں انتہائی مؤثر ہے۔ چار ہفتے بعد جلد اورگردن، دونوں کے حوالے سے شماریاتی نتیجہ حاصل ہوا۔ بارہ ہفتے بعد ’بائیو آئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں موجود 86% مریضوں کی ناہموار جلد اور چہرے میں واضح بہتری نظر آئی،71% مریضوں کے چہروں کی جلد دھوپ سے جھلسی ہوئی تھی، 69% کی گردن پر ناہموار جلد تھی ،جبکہ 60% کی گردن کی جلد دھوپ سے جھلسی ہوئی تھی۔
ناہموار جلد کا مطالعہ، 2005
ناہموار جلد کا مطالعہ، 2005
مرکز جانچ پڑتال
ساؤتھ افریقہ کی میڈیکل یونیورسٹی کی فوٹی بائیو لوجی لیبارٹری
مقصد
نشانات کے مندمل کرنے میں بائیوآئل کی افادیت کا جائزہ لینا
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 30 خواتین شرکاء شرکاء کی عمر: 18 تا 55 سال جھلسنے کی قسم: چہرے پر دھبّے
طریقئہ کار
سنگل بلائنڈ(تشخیص کنندہ)، رینڈمائزڈ اور کنٹرولڈ۔پیئرڈ اسٹڈی ڈیزائن،مریضوں میں موازنے کی اجازت دیتا ہے۔ مریضوں کے چہرے اورگردن، دونوں کی جلد جھلسی ہوئی تھی، آدھے چہرے/گردن کے اسٹڈی ڈیزائن کو یقینی بنایا گیا۔ پراڈکٹ کو متا ثرہ جگہ پر بارہ ہفتوں تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ آئل کو نگرانی میں اور باقاعدہ وقفوں میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد چوتھے، آٹھویں اور بارہویں ہفتے میں تشخیصی جائزہ لیا گیا۔
نتیجہ
بائیوآئل نے ہلکی اور گہری، دونوں کی طرح کی رنگت والی ناہموار جلد کوبہتر بنا دیا۔ 93% مریضوں میں 6 ہفتوں میں بہتری ریکارڈ کی گئی۔ ڈاکٹر کوہلکی اور گہری رنگت والی دونوں طرح کی جلدوں میں شروع والے ہفتے سے آٹھویں ہفتے تک یکساں بہتری نظرآئی۔ ڈاکٹر کو گہری رنگت والی جلد ی اقسام میں آٹھ تا بارہ ہفتوں میں مزید بہتری نظر آئی۔
بڑھتی عمر سے متاثرہ جلد کا مطالعہ،2011
بڑھتی عمر سے متاثرہ جلد کا مطالعہ،2011
مرکز جانچ پڑتال
تھامس جے اسٹیفنز اینڈ ایسوسی ایٹس، انکارپوریٹڈ، ٹیکساس، یونائیٹڈ اسٹیٹس آف امریکا۔
مطالعہ نمبر1 : چہرہ اور گردن
مقصد
جب دھوپ میں کم تا درمیانی درجے کی جھلسی ہوئی جلد والی خواتین نے اپنے چہرے اور گردن پر بائیوآئل کو استعمال کیا تواسے انتہائی مؤثر پایا۔
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 67 خواتین شرکاء۔ طبّی طور پرجن کے چہرے اور گردن کی جلد، دھوپ میں کم تا درمیانی درجے کی جھلسی ہوئی تھی۔ ’بائیوآئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 35 مریضوں،جبکہ ’نو ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 32 مریضوں کو شامل کیا گیا۔ شرکاء کی عمر: 30 تا 70 سال
طریقئہ کار
رینڈمائزڈ، کنٹرولڈ، گریڈر۔ بلائنڈڈ صلاحیت۔ مریضوں نے پہلی اسکریننگ کی جانچ پڑتال میں حصہ لیا، جس کے بعد ایک ہفتے کا واش آؤٹ پیریئڈ بھی تھا۔ پراڈکٹ کوچہرے اور گردن پربارہ ہفتے تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ ابتدائی دوروں میں آئل کو نگرانی میں لگایاگیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد دوسرے، چوتھے، آٹھویں اوربارہویں ہفتے میں طبّی جائزے لیے گئے۔ مریضوں کے چہرے اور گردن کی ناہموار جلد اور دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد کی مناسبت سے طبّی طور پردرجِ ذیل طریقے سے الگ الگ گریڈنگ کی گئی: مجموعی سراپا، فائن لائنز، گہری جھریاں، دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد، ناہموار جلد، ظاہری کھردراپن/ملائمت ، مسّے کا کھردراپن/ملائمت،پختہ اظہار، اور صراحت (بے توجہی)۔
نتیجہ
بائیوآئل، چہرے اور گردن کی ناہموار جلد اور دھوپ میں جھلسی ہوئی جلد کو بہتر بنانے میں انتہائی مؤثر ہے۔ آٹھ ہفتے بعد طبّی طریقے سے کی جانے والی مؤ ثر گریڈنگ کے بعد ایک اہم شماریاتی نتیجہ حاصل ہوا۔ بارہ ہفتے بعد’بائیو آئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں موجود 94% مریضوں کے چہرے پر مجموعی طور پر واضح بہتری نظر آئی،80% مریضوں کی گردن پر مجموعی طور پر واضح بہتری دیکھنے میں آئی۔
مطالعہ نمبر2 : جسم
مقصد
بائیوآئل کی افادیت کو اس صورت میں جانچناکہ جب دھوپ میں کم تا درمیانی درجے کی جھلسی ہوئی جلد والی خواتین نے اپنی گردن سے نیچے، ٹانگ کے نچلے حصّے اور بازوؤں پراسے لگایا تو انتہائی مؤثر پایا۔
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 67 خواتین شرکاء ۔ طبّی طور پرجن کے چہرے اور گردن کی جلد، دھوپ میں کم تا درمیانی درجے کی جھلسی ہوئی تھی ۔ ’بائیوآئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 35 مریضوں،جبکہ ’نو ٹریٹمنٹ سیل‘ میں 32 مریضوں کو شامل کیا گیا۔ شرکاء کی عمر: 30 تا 70 سال
طریقئہ کار
رینڈمائزڈ، کنٹرولڈ، گریڈر۔ بلائنڈڈ صلاحیت۔ مریضوں نے پہلی اسکریننگ کی جانچ پڑتال میں حصہ لیا، جس کے بعد ایک ہفتے کا واش آؤٹ پیریئڈ بھی تھا۔ پراڈکٹ کو گردن سے نیچے، ٹانگوں کے نچلے حصّوں اور بازوؤں پر بارہ ہفتے تک دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔ ابتدائی دوروں میں آئل کو نگرانی میں لگایا گیا۔ پھر شروع کے ہفتے اور اس کے بعد دوسرے، چوتھے، آٹھویں اوربارہویں ہفتے میں طبّی جائزے لیے گئے۔ مریضوں کی گردن سے نیچے، ٹانگوں کے نچلے حصّوں اور بازوؤں کی مناسبت سے طبّی طور پر درجِ ذیل طریقے سے الگ الگ گریڈنگ کی گئی: مجموعی سراپا، جھریوں زدہ جلد،خشکی/اسکیلنگ، ظاہری کھردراپن/ملائمت اور مسّے کا کھردراپن/ ملائمت۔
نتیجہ
بائیوآئل ، دھوپ میں تمام جسم کی جھلسی ہوئی (عمررسیدہ) جلد کو بہتر بنانے میں انتہائی مؤثر ہے ۔ چار ہفتے بعد طبّی طریقے سے کی جانے والی مؤ ثر گریڈنگ کے بعد ایک اہم شماریاتی نتیجہ حاصل ہوا۔ بارہ ہفتے بعد’بائیو آئل ٹریٹمنٹ سیل‘ میں موجود 89%مریضوں کی گردن سے نیچے، ٹانگوں کے نچلے حصّوں اور بازوؤں پر مجموعی طور پر واضح بہتری نظر آئی۔
پانی کی کمی سے متاثرہ جلد کا مطالعہ،2011
پانی کی کمی سے متاثرہ جلد کا مطالعہ،2011
مرکز جانچ پڑتال
ساؤتھ افریقہ کی میڈیکل یونیورسٹی کی فوٹی بائیو لوجی لیبارٹری
مطالعہ نمبر1
مقصد
جلد کی سب سے اوپری تہہ (SC) کے بیریئر فنکشن اور ہائیڈریشن میں بہتری کے لیے ایک مرتبہ بائیو آئل لگانا اور اس کی افادیت کو جانچنا۔
نمونہ
مریض: مختلف قومیتوں کی 40 خواتین شرکاء ۔ آزمائش کی جگہ: آزمائشی پراڈکٹس تمام مریضوں کے ہتھیلی سے کہنی تک بازوؤں پر لگائی گئیں۔
طریقئہ کار
جلد کی ہائیڈریشن بذریعہ کورنیو میٹر بطور ابتدائی پیمائش، بیریئر فنکنش کی پڑتال بذریعہ ویپو میٹربطور دوسری پیمائش۔ اس پینل میں موجود لوگوں نے اس پیمائش سے دو گھنٹے پہلے، ہتھیلی سے کہنی تک اپنے بازو صابن سے دھوئے۔ ابتدائی انسٹرومنٹل پیمائشیں لی گئیں۔ پھر تمام مریضوں کے بازوؤں پر الگ الگ جگہوں پر بائیو آئل اور ایک دوسرا آئل لگایا گیا۔پراڈکٹ لگانے کے بعد فوراً ہی دوسری پیمائشیں لی گئیں، اور اسی طرح پھر دو گھنٹے بعد پراڈکٹس کو لگانے اور صاف کرنے کے بعد بھی کیا گیا۔ ایک ایسی سائٹ کے بھی تمام پوائنٹس کی پیمائش کی گئی جسے چھیڑا نہیں گیا تھا۔
نتیجہ
فوری طور پر لگانے کے بعد دونوں آئلزنے ٹرانسپیڈرمل واٹر(TEWL) میں’ نوٹریٹمنٹ کنٹرول ‘ کے مقابلے میں کمی کردی۔جلد کی مؤثر گنجائش کی بڑھتی ہوئی ویلیوزمیں دو گھنٹے پہلے صفائی کے وقت میں دونوں آئلز کے لیے جلد میں ہائیڈریشن کا مشاہدہ کیا گیا۔ جلد سے آئلز کی صفائی کے دو گھنٹے بعد بائیو آئل نے دوسرے آئل کے مقابلے میں TEWL ویلیوزمیں مزید اضافہ کیا، جس سے نمی کا اخراج دیکھنے میں آیا اور اسی لیے جلد کی ہائیڈریشن میں بھی اضافہ ہوا۔
مطالعہ نمبر2
مقصد
بائیو آئل روزانہ دو مرتبہ لگانے سے نمی کے اثرات اور خشک جلد سے چھٹکارے کا مشاہدہ کرنا۔
نمونہ
مریض: یورپی 25 خواتین شرکاء ۔ آزمائش کی جگہ: آزمائشی پراڈکٹس، تمام مریضوں کی اوپری اور نچلی ٹانگوں پر لگائی گئیں۔
طریقئہ کار
سات دن کے وقفے کے دوران خشک جلد کو نرم بنانے کے لیے صابن استعمال کیا گیا۔ بائیو آئل اور دوسرے آئل کو دن میں دو مرتبہ لگایا گیا۔پہلے اور تیسرے دن جلد کا جائزہ لیا گیا۔ دُگنا (2x) میگنیفائنگ لیمپ استعمال کرتے ہوئے ایک وژول ایویلوئیٹر سے وژول ایویلوئیشنز کروائی گئیں۔ ایک کنٹرول اور غیر مستعمل جگہ کا بھی تمام اوقات میں جائزہ لیا جاتا رہا۔
نتیجہ
بغیرکوئی ٹریٹمنٹ کرنے والی جلد کے مقابلے میں بائیوآئل اور دوسرے آئل کے استعمال والی جلد کی خشکی بہتر ہوئی۔ بائیو آئل کی کارکردگی تیسرے دن زیادہ بہتر نظر آئی۔ جلد پر جس جگہ بائیو آئل لگایا گیا، جلد کا وہ حصہ دیکھنے میں ہی بہت بہتر نظر آیا اور بائیو آئل کی افادیت کی تصدیق ہوگئی۔
کیل مہاسوں کا ٹیسٹ،2006
کیل مہاسوں کا ٹیسٹ،2006
مرکز جانچ پڑتال
فیچر کاسمیٹکس، پریٹوریا، ساؤتھ افریقہ۔
مقصد
یہ جانچنا کہ آیا بائیو آئل کا استعمال کیل مہاسوں اور چربی دانوں کے بننے کا سبب تو نہیں ہے۔
نمونہ
مریض: 21 شرکاء، مختلف قومیتوں کے 17 خواتین اور 4 مرد،50% مہاسوں کا شکار۔
طریقئہ کار
رینڈمائزڈاورکنٹرولڈ۔ پراڈکٹ کو اٹھائیس دن تک روزانہ دو مرتبہ لگایا گیا۔ یہ تین حصے جانچے گئے: جس حصے پر کچھ نہیں لگایا گیا (نیگیٹیو کنٹرول)، جس حصے پر بائیو آئل لگایاگیا، اورایک حصے پر ایسیٹائلیٹڈ لینولن الکحل لگائی گئی (پازیٹیو کنٹرول ۔ ایک مشہور ایکنی جینک پراڈکٹ)۔ ٹیسٹ کرنے والی پراڈکٹس کو کمر کے اوپری جانب (کندھوں پر) لگایا گیا۔
نتیجہ
ثابت ہوا کہ بائیو آئل کے استعمال سے کیل مہاسے اور چربی دانے نہیں ہوتے۔ جس جگہ بائیو آئل لگایا گیا اور جس جگہ کچھ نہیں لگایاگیا، اُن دونوں جگہوں پر کوئی فرق نظر نہیں آیا۔ پازیٹیو کنٹرول سے کیل مہاسے نہیں ہوئے۔
حسّاس جلد کا ٹیسٹ، 2006
حسّاس جلد کا ٹیسٹ، 2006
مرکز جانچ پڑتال
فیچر کاسمیٹکس، پریٹوریا، ساؤتھ افریقہ۔
مقصد
حسّاس جلد والے مریضوں کی جلد پر بائیو آئل استعمال کرکے مشاہدہ کرنا کہ کہیں ان کی جلد پر خارش تو نہیں ہورہی۔
نمونہ
مریض: 21 شرکاء شرکاء کی عمر: 18 تا 65 سال انتخاب کا معیار: حسّاس جلد والے مریضوں کا انتخاب کر کے ان کی جلد پر پازیٹیو کنٹرول (لیکٹک ایسڈ) لگایا، تاکہ ان کی جلد کی حسّاسیت کی نوعیت کو جانچا جاسکے۔
طریقئہ کار
رینڈمائزڈ اورکنٹرولڈ۔ جلد کے ان تین حصوں کو جانچا گیا: جس حصے پر ڈی آیونائزڈ پانی لگایا گیا (نیگیٹیو کنٹرول)، جس حصے پر بائیو آئل لگایا گیا، اور جس حصے پر سوڈیم لارِل سلفیٹ کا 1% محلول لگایا گیا (پازیٹیو کنٹرول - ایک مشہور اسکن اریٹینٹ)۔ ٹیسٹ کرنے والی پراڈکٹس کو ایک کپڑے کے ٹکڑے کی مدد سے ہاتھ ( ہتھیلی سے کہنی تک ) پر لگایا گیا اور 24 گھنٹے بعد صاف کردیا گیا۔ پراڈکٹس لگانے کے 24 ، 48 ،72 اور96 گھنٹے بعد جلد کو جانچا گیا اور ری ایکشنز کو نوٹ کیا گیا۔ ڈرمیٹالوجسٹ ان آزمائشوں کے دوران موجود رہے۔ جلد پر ہونے والے ری ایکشنز کی 0 تا 4 اسکیل پر ریٹنگ کی گئی (0 کا مطلب ’کوئی ردِّ عمل نہیں‘ اور4 کا مطلب ’شدید سرخی‘)
نتیجہ
بائیو آئل، حسّاس جلد والے مریضوں کے لیے ایک غیر مضر پراڈکٹ ثابت ہوا۔ مریضوں میں سے کسی کو بائیوآئل کا کوئی بھی مضر ری ایکشن نہیں ہوا۔ بائیوآئل کی 96 گھنٹے بعد کی ایوریج ری ایکشن ویلیو 0.03 تھی۔ بائیو آئل، ڈی آیو نائزڈ واٹر (نیگیٹیو کنٹرول) کے مقابلے میں زیادہ بہتر ثابت ہوا۔
جذب ہونے کا مطالعہ، 2011
جذب ہونے کا مطالعہ، 2011
مرکز جانچ پڑتال
پروڈرم انسٹیٹیوٹ فار اپلائیڈ ڈرمیٹالوجیکل ریسرچ، ہیمبرگ، جرمنی
مطالعہ نمبر1
مقصد
اسٹینڈرڈائزڈ طریقے سے لگانے اور ملنے کے بعد بائیو آئل کے جذب ہونے کی شرح کا مشاہدہ کرنا۔
نمونہ
مریض: 22 تربیت یا فتہریٹ کرنے والے افراد (21 خواتین اور ایک مرد) آزمائش کی جگہ: تمام ریٹ کرنے والو ں کے ہاتھ ( ہتھیلی سے کہنی تک) پرٹیسٹ کرنے والی پراڈکٹس کولگایا گیا۔
طریقئہ کار
ڈبل بلائنڈ،رینڈمائزڈاورکنٹرولڈ۔ بائیو آئل اور دوسرے آئل کوریٹ کرنے والے افراد کے ہاتھ پر( ہتھیلی سے کہنی تک ) ٹیسٹ والے مقررہ حصوں پر لگایا گیا۔ ریٹ کرنے والوں نے مقررکردہ اسپیڈ کے مطابق 100 سائیکلک موومنٹس کیں۔ ریٹ کرنے والوں نے پھر پراڈکٹس کو جذب کرنے والے ایک 5 پوائنٹ اسکیل (’کم رفتار میں جذب ہونا‘ سے بہت تیز جذب ہونا‘ تک) کے ذریعے اپنا مشاہدہ بتایا۔ جلد پر آئل کی مقدار کو جانچنے کے لیے سیبو میٹر کی مدد لی گئی، اور ایسا دو مواقع پر کیا گیا، پراڈکٹ لگانے سے پہلے اور پراڈکٹ لگانے کے دو منٹ بعد۔
نتیجہ
تربیت یافتہ ریٹ کرنے والے افراد کی اکثریت (77.3%) نے جلد میں بائیو آئل جذب ہونے کی رفتار کو ’ بہت تیز‘ یا ’ تیز‘ آزمایا۔ اس کی تصدیق سیکنڈ ٹائم پوائنٹ پر سیبو میٹر ریڈنگز کے ذریعے کی جانے والی انسٹرومنٹل پیمائش کے ذریعے کی گئی، جس سے ظاہر ہوا کہ جلد پر بائیو آئل کی باقی رہ جانے والی مقداردوسرے آئل کے مقابلے میں انتہائی کم ہے ۔
مطالعہ نمبر2
مقصد
اسٹینڈرڈائزڈ طریقے سے لگانے اور ملنے کے بعد بائیو آئل کے جذب ہونے کی شرح کا مشاہدہ کرنا۔
نمونہ
مریض: 100 شرکاء (97 خواتین اور3 مرد) آزمائش کی جگہ: تمام شرکاء کے ہاتھ ( ہتھیلی سے کہنی تک ) پرٹیسٹ کرنے والی پراڈکٹس کولگایا گیا۔
طریقئہ کار
ڈبل بلائنڈ، رینڈمائزڈاورکنٹرولڈ۔ بائیو آئل اور دوسرے آئل کوشرکاء کے ہاتھ پر( ہتھیلی سے کہنی تک ) ٹیسٹ والے مقررہ حصوں پر لگایا گیا۔شرکاء نے ٹیسٹ والی ہر پراڈکٹ کو ایک منٹ بعد صاف کیا۔پھر شرکاء نے پراڈکٹس کی جذب ہونے کی صلاحیت کو 5 پوائنٹ اسکیل پر’ بہت آہستہ جذب ہوا‘ سے’ بہت جلدی جذب ہوا ‘ تک درجہ بندی کی ۔
نتیجہ
شرکاء کی اکثریت(72%) نے بائیو آئل کو جلد میں ’بہتتیزی سے‘ یا ’تیزی سے‘ جذب ہونے والا آئل پایا۔
جاذبیت کا مطالعہ،2008
جاذبیت کا مطالعہ،2008
مرکز جانچ پڑتال
پروفیسر ڈاکٹر جے ویچرز نے ریگانو لیبارٹریز ، میلان، اٹلی میں تجربہ کیا۔
مقصد
اس بات کو جانچنا کہ آیا بائیو آئل میں جنین (رحمِ مادر میں موجود بچہ) کے پردے جیسی جاذبیت ہے ۔ (یہ ایک چربی ملا مادّہ ہوتا ہے جس نے پیدائش کے وقت رحم میں بچے کی جلد کو ڈھانپا ہوا ہوتا ہے۔ اس کی جاذبیت کے آئیڈیل لیول کی وجہ سے جلد میں موجود نمی کو زیادہ تر کاسمیٹک سائنسدان ’سونے جیسا اہم‘مانتے ہیں )
طریقئہ کار
پانی کی معلوم مقداروں کو بیکرز میں ڈالا گیا جنھیں ایسی جھلّی ، Vitro-Skin153 سے ڈھانپا گیا تھا جس میں سے کچھ اجزاء چھن سکیں اور کچھ نہیں، جس کی سطح کی خصوصیت انسانی جلدجیسی ہوتی ہے ۔ اس جھلّی (ممبرین) پر جنین کا پردہ اور بائیو آئل لگائے گئے اور وقتاً فوقتاً بیکر میں سے کم ہوتی پانی کی مقدار کو بھی نوٹ کیا گیا۔جھلّی ( ممبرین ) پر کسی بھی پراڈکٹ کو لگائے بغیر پانی کے کم ہونے کے تناسب سے موازنہ کیا گیا۔ ہر پراڈکٹ کے لیے پانی کے بخارات کی منتقلی کی شرح کوجمع کیا گیا اور g/m میں کھا گیا۔
نتیجہ
عملی مظاہرے سے ثابت ہوا کہ بائیو آئل میں جنین (رحمِ مادر میں موجود بچہ) کے پردے جیسی جاذبیت ہے،کیونکہ بائیو آئل میں 23.5 اورجنین میں27.2 ہے۔

خطابات
اعزازات سب سے زیادہ تجویز کردہ
عام یا کھنچاؤ کے نشانات وغیرہ کے لیے ڈاکٹرز/دواسازوں/دائیوں کیسب سے زیادہ تجویز کردہ پراڈکٹ۔
Australia, ڈاکٹر کاسروے (ACA Research HCP Study Jan 2019, 2019)
Australia, دواساز کا سروے (ACA Research HCP Study Jan 2019, 2019)
Canada, ڈاکٹر کاسروے (EnsembleIQ Healthcare Group and RK Insights, 2019)
Canada, دواساز کا سروے (EnsembleIQ Healthcare Group and RK Insights, 2019)
Germany, دواساز کا سروے (BVDA / German Pharmacist Association, 2015)
Ireland, دواساز کا سروے (3 Gem, 2015)
Italy, دائی کا سروے (Millward Brown, 2014)
Kenya, دواساز کا سروے (Consumer Insight, 2015)
New Zealand, ڈاکٹر کاسروے (Colmar Brunton, 2018)
South Africa, ڈاکٹر کاسروے (IPSOS, 2018)
South Africa, گائنا کولوجسٹ کا سروے (IPSOS, 2018)
South Africa, دائی کا سروے (IPSOS, 2018)
South Africa, دواساز کا سروے (IPSOS, 2018)
United Kingdom, دواساز کا سروے (3 Gem, 2018)
Zimbabwe, ڈاکٹر کاسروے (Marketers Association of Zimbabwe, 2016)
Zimbabwe, دائی کا سروے (Marketers Association of Zimbabwe, 2016)
Zimbabwe, دواساز کا سروے (Marketers Association of Zimbabwe, 2016)
سب سے زیادہ فروخت ہونے والا
عام نشانات اور کھنچاؤ کے نشانات کے لیے سب سے زیادہ فروخت ہونے والی پراڈکٹ
Australia (Aztec Segment and item list as defined by Aspen Pharmacare, based on AU Grocery & Pharmacy Scan combined data within Hand & Body Skin Care Database. September, 2017)
Belgium (IMS data Q2 2019 (value))
Botswana (Medswana (Pty) Ltd, 2016)
Canada (Nielsen MarketTrack. Specialty Creams, Lotions and Scar Treatments. National Grocery, Drug + Mass, 52 weeks ending Feb 3, 2018)
Finland (Pharmacy data and GFT retail data, value sales, 2016)
Germany (Nielsen IMS Health)
Hungary (IMS Health Pharmacy Survey Q1, 2016)
Ireland (IMS Firming & Anti-Stretch Mark Total value 52 week period July 18)
Italy (IMS Dataview Multichannel, Pharmacy + Parapharmacy + Corner Gdo, Reconstructed Class Anti-stretch marks (82F2A) + Scars (46A3), sell-out volume, rolling year ending in September 2018. )
Kenya (Consumer Insight, 2015)
Liechtenstein (IMS Health GmbH - Pharma Trend, Units & Sales Value, Sept 2017)
Malaysia (Nielsen, Scar & Stretch Mark, PM Drugstore/Pharmacy, January - June 2017)
Namibia (Geka Pharma (Pty) Ltd 2016 and Nampharm 2016)
Netherlands (IRI, YTD 52 2016)
New Zealand (IRI, National Combined MAT, October 2015)
Poland (IQVIA Poland Pharmascope 04/2019, 82F2 FIRMING&A-STRETCH PRODS, Value(PLN), MAT 04/2019 © 2019 IQVIA and its affiliates. All rights reserved.)
Portugal (39,4% Nº1 in Strech Market - Pharmacy only IQVIA Portugal July 2019)
Singapore (Nielsen, Scar & Stretch Mark, PM Drugstore/Pharmacy, 2016)
South Africa (Nielsen, Total Value ranking 52 week period ending 31 Jan 2018)
Swaziland (Swazi Pharm Wholesalers (Pty) Ltd, 2016)
Sweden (Nielsen Scanningdata, HPC, Other Skincare, Scars/Stretchmarks, MAT W52, 2018)
Switzerland (IMS Health GmbH - Pharma Trend, Units & Sales Value, Sept 2017)
Ukraine (PharmStandard)
United Kingdom (IRI Value Sales, Skincare Treatments category, Total UK, 52 weeks ending 1 Dec 2018)
Zimbabwe (Marketers Association of Zimbabwe, May 2016)

دستیابی
Pakistan
تجویز کردہ ریٹیل پرائس
₨ 450.00 (۲۵ ملی لیٹر )
₨ 900.00 (٦۰ ملی لیٹر)

دستیاب ہے
Leading Retailers